تفصیلات
نقشے

"رحیمانہ قتل" مراکز، جرمنی، 1940-1945

نازیوں کی اصطلاح میں 'رحیمانہ قتل" کا مطلب ان جرمنوں کو منظم طریقے سے قتل کرنا تھا جنھیں وہ جینیاتی بیماریوں یا خامیوں کے باعث "زندہ رہنے کے قابل" نہیں سمجھتے تھے۔ 1939 کے شروع میں گیس سے ہلاک کرنے کی تنصیبات برن برگ، برینڈن برگ، گریفینیک، ھادامار، ھارٹ ھائم اور سونین سٹائن میں قائم کی گئیں۔ ڈاکٹر مریضوں کا انتخاب کرتے تھے اور انھیں مطب سے ان میں سے کسی ایک گیس چیمبر میں بھیج کر ہلاک کر دیا جاتا تھا۔ مریضوں کو اس طرح ہلاک کرنے لے خلاف جب عوام میں غیض و غضب بھڑک اٹھا تو ڈاکٹروں نے پورے جرمنی میں موجود کلینکوں اور اسپتالوں میں "رحیمانہ قتل" کیلئے منتخب مریضوں کو موت کا انجکشن دینا شروع کر دیا۔ اس طرح "رحیمانہ قتل" کا منصوبہ چلتا رہا اور جنگ کے اختتام تک جاری رہا۔


  • US Holocaust Memorial Museum

شیئر کریں

"Euthanasia" centers, Germany 1940-1945 [LCID: ger73070]

Thank you for supporting our work

We would like to thank The Crown and Goodman Family and the Abe and Ida Cooper Foundation for supporting the ongoing work to create content and resources for the Holocaust Encyclopedia. View the list of all donors.