تفصیلات
نقشے

مقبوضہ پولینڈ میں یہودی بستیاں، 1939-1941

جرمنی نے مغربی پولینڈ پر سن 1939 میں قبضہ کیا۔ اس علاقے کا اکثر حصہ جرمن مملکت سے ملحق کر دیا گيا۔ جرمن فوجوں نے جون 1941 تک مشرقی پولینڈ پر قبضہ نہیں کیا تھا۔ جنوب مرکزی پولینڈ میں جرمنی نے جنرل گورنمنٹ (عام حکومت) قائم کی، جہاں اکثر ابتدائي یہودی بستیاں قائم کی گئیں۔ یہ یہودی بستیاں شہر کے اندر بند ڈسٹرکٹ تھے جہاں جرمنوں نے یہودیوں کو انتہائی تکلیف دہ حالت میں رہنے پر مجبور کیا تھا۔ ان گھیٹو یعنی یہودی بستیوں نے یہودیوں کو نہ صرف شہر کی تمامتر برادری سے الگ تھلگ کر دیا تھا بلکہ اُنہیں قریبی موجود دیگر یہودی برادریوں سے بھی الگ کر دیا تھا۔ وارسا گھیٹو 12 اکتوبر 1940 کو قائم کی گئی تھی جو رقبے اور آبادی کے لحاظ سے سب سے بڑی یہودی بستی تھی۔ اس میں ساڑھے تین لاکھ یہودی تھے جو شہر کی یہودی آبادی کا تقریباً 30 فیصد شہر کے کل رقبے کے 2.4 فیصد میں محدود کر دئے گئے تھے۔


ٹیگ


  • US Holocaust Memorial Museum

شیئر کریں

آرٹیکل پر واپس جائیں

Ghettos in occupied Poland, 1939-1941 [LCID: pol74490]

Thank you for supporting our work

We would like to thank The Crown and Goodman Family and the Abe and Ida Cooper Foundation for supporting the ongoing work to create content and resources for the Holocaust Encyclopedia. View the list of all donors.