تاریخی فلم فوٹیج

یادگار جلوس یورپ کے یہودیوں کو بچانے کا مطالبہ کرتا ہے۔

جب نازیوں کے ہاتھوں یہودیوں کے قتل عام کی خبریں امریکہ پہنچیں تو یہودیوں کی مدد کرنے کیلئے روزویلٹ انتظامیہ پر زبردست دباؤ پڑا۔ عمل کو تحریک دینے کیلئے ڈرامہ نگار بین ھیچٹ نے یہودیوں کے ظلم و ستم کا شکار بننے والے یہودیوں کے حوالے سے ایک یادگار ڈرامہ تیار کیا، "ہم کبھی نہیں مریں گے۔" یہ جلوس جس کا اہتمام صہیونی رویژنسٹ برگسن گروپ نے کیا تھا، نیویارک کے میڈیسن اسکوائر گارڈن میں اجتماعی مظاہرے کا ایک حصہ تھا۔ بعد میں یہ پروگرام امریکہ کے دوسرے شہروں میں بھی ہوا۔ یہ شو برگسن گروپ کی اُن کوششوں کا ایک حصہ تھا جس کے ذریعے واشنگٹن پر دباؤ ڈالا جا رہا تھا کہ وہ یورپ میں بچے ہوئے مظلوم یہویوں کو بجانے کیلئے مناسب اور حتمی قدم اٹھائے۔

مکمل نقل

جلوس "ہم کبھی نہیں مریں گے" نیویارک کے یہودیوں کا نازی سفاکی کے خلاف احتجاج تھا۔ لُبلن میں ہماری پانچ سو عورتیں اور بچوں کو بازار لے جایا گيا اور اُنہیں سبزی کے ٹھیلوں کے سامنے کھڑا کیا گیا جنہیں ہم چھی طرح جانتے تھے۔ یہاں جرمنوں نے ہم پر اپنی مشین گنیں تانیں اور ہم سب کو گولیوں سے مار ڈالا۔ ہمیں یاد کرنا۔ [بیان کرنے والا:] اور ایک ڈرامائی اپیل اس طور پر بنائی جاتی ہے جو پال مونی بے کس لوگوں کے خلاف نازی ظلم وستم کو بیان کرتا ہے۔ [مونی:] یورپ میں چار ملین یہودی باقی ہیں۔ جرمنی نے وعدہ کیا ہے کہ وہ دنیا کو اس سال کے اختتام تک کرسمس کے تحفے کے طور پر چار ملین یہودیوں کی لاشیں پیش کرے گا۔ اور یہ کوئی یہودی مسئلہ نہیں ہے۔ یہ ایک ایسا مسئلہ ہے جس کا تعلق انسانیت کے ساتھ ہے۔ یہ انسانی روح کیلئے ایک کھلا چیلنج بھی ہے۔ [بیان کرنے والا:] پھر دو ملین لوگوں کیلئے ایک مرثیہ۔ [میوزک]


ٹیگ


  • University of South Carolina Newsfilm Archive
آرکائیوز کی تفصیلات دیکھیں

Thank you for supporting our work

We would like to thank The Crown and Goodman Family and the Abe and Ida Cooper Foundation for supporting the ongoing work to create content and resources for the Holocaust Encyclopedia. View the list of all donors.